سندھ ہائی کورٹ نے سوشل میڈیا سے ریلیٹڈ ریمارکس دے دیے

سندھ ہائی کورٹ کے حالیہ ریمارکس نے سوشل میڈیا کی ظاہری انتظامیہ اور ذمہ دار اداروں پر روشنی ڈالی ہے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ مزید تفصیلات منظر عام پر آئیں گی۔ چیف جسٹس عقیل عباسی نے دو رکنی بینچ کی سربراہی کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) پارٹی کی جانب سے جواب جمع کرانے سمیت انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا ایپ سروسز کی معطلی سے متعلق درخواستوں پر سماعت کی۔

سماعت کے دوران پی ٹی آئی کے قانونی نمائندے نے بتایا کہ وزارت داخلہ اور دیگر اداروں نے سیکیورٹی خدشات کے باعث موبائل فون اور انٹرنیٹ سروس معطل کی تھی۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ 8 فروری کو موبائل کمپنیوں کو سروسز معطل کرنے کے لیے ایک ای میل بھیجی گئی اور 9 فروری کو ان کی بحالی کے لیے ایک ای میل بھیجی گئی۔

جواب میں، چیف جسٹس عباسی نے پی ٹی آئی کے اقدامات کے پیچھے بے گناہی یا مجبوری پر سوال اٹھایا، سروس بند کرنے سے متعلق متضاد بیانات کو اجاگر کیا۔ انہوں نے پی ٹی آئی کی جانب سے مربوط وضاحتوں کے فقدان پر تنقید کرتے ہوئے انٹرنیٹ کی معطلی کے پیچھے وجوہات کی وضاحت کی ضرورت پر تبصرہ کیا۔

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ اگر پی ٹی آئی نے کسی کمپنی کو سروسز بحال کرنے کی ہدایت کی اور خدمات معطل رہیں تو ایسی کمپنی کا احتساب ہونا چاہیے۔ انہوں نے ملک کے معاملات کے انتظام پر بھی سوال اٹھائے، انٹرنیٹ کی فعالیت اور اس کے کنٹرول کے طریقہ کار کے ساتھ قابل توجہ مسائل کی نشاندہی کرتے ہوئے، یہاں تک کہ بچوں کے ذریعہ بھی۔

پی ٹی آئی کے وکیل نے واضح کیا کہ 9 فروری کے بعد کسی بھی کمپنی کو انٹرنیٹ یا موبائل فون سروس بند کرنے کی ہدایت نہیں کی گئی۔ تاہم چیف جسٹس عباسی نے زور دیا کہ سروسز اب بھی کام نہیں کر رہیں، جس سے پی ٹی آئی کی ہدایات کی تعمیل کے بارے میں خدشات ہیں۔

عدالت نے درخواست گزار کے وکیل کی جانب سے دائر توہین عدالت کی درخواست پر پی ٹی آئی کے چیئرمین اور دیگر کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 20 مارچ تک جواب طلب کر لیا۔علاوہ ازیں صحافی ضرار کھوڑو کی درخواست پر عدالت نے جواب کی مہلت میں توسیع کر دی۔ 20 مارچ تک۔ عدالت نے وزارت داخلہ کو الیکشن کے دن انٹرنیٹ سروس کی معطلی سے متعلق آئندہ سماعتوں کے بارے میں جواب دینے کی بھی ہدایت کی۔ سندھ ہائی کورٹ نے ایکس کی معطلی سے متعلق انٹرنیٹ سروسز کی بحالی سے متعلق حکم امتناعی میں مزید توسیع کردی۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *