وزیر داخلہ سندھ کا ایم کیو ایم پر پولیس فورس کے استحصال کا الزام

سندھ کے وزیر داخلہ ضیاء الحسن لنجار نے متحدہ قوم موومنٹ (ایم کیو ایم) کے رہنماؤں پر سنگین الزامات عائد کرتے ہوئے الزام عائد کیا ہے کہ وہ پولیس فورس کو اپنے مفاد کے لیے استعمال کررہے ہیں۔ ایک حالیہ بیان میں، لنجار نے ایم کیو ایم کو اپنے ایجنڈے کو آگے بڑھانے کے لیے، خاص طور پر مجرموں سے نمٹنے کے لیے پولیس فورس کا مبینہ طور پر استحصال کرنے پر تنقید کی۔

پریس کانفرنس کے دوران وزیر لنجار نے ایم کیو ایم رہنماؤں کی تنقید کا جواب دیتے ہوئے سوال کیا کہ جب ایم کیو ایم اقتدار میں ہوتی ہے تو سب کچھ مثبت کیوں لگتا ہے لیکن جب وہ نہیں ہوتا تو منفی کیوں لگتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کی قیادت مگرمچھ کے آنسو بہا رہی ہے اور بیانیے کو توڑ مروڑ کر پیش کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

وزیر لنجار کے تبصروں کے علاوہ صوبائی وزیر شرجیل میمن نے بھی ایم کیو ایم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ان کے بیانات کا مقصد پولیس فورس کا حوصلہ پست کرنا ہے۔ میمن نے قانون کی حکمرانی کو کمزور کرنے کے بجائے سیاسی رہنماؤں کی حمایت کرنے کی اہمیت پر زور دیا، تجویز کیا کہ افواج کے اندر تصادم پیدا کرنا صرف ان لوگوں کے مفادات کو پورا کرتا ہے جو امن میں خلل ڈالنا چاہتے ہیں۔

ایم کیو ایم، پاکستان کی ایک سیاسی جماعت، پورے سندھ میں رینجرز، ایک پیرا ملٹری فورس، کے مساوی اختیارات کے اپنے مطالبے میں آواز اٹھاتی رہی ہے۔ پارٹی کا خیال ہے کہ سندھ بھر میں رینجرز کو یکساں اختیارات دینا جرائم سے مؤثر طریقے سے نمٹنے اور امن و امان کو برقرار رکھنے کے لیے بہت ضروری ہے۔

ایم کیو ایم کے موقف کی جڑ اس کے تاثر میں ہے کہ صوبائی حکومت عوام کی ضروریات اور خدشات کو مناسب طریقے سے حل نہیں کر رہی ہے۔ پارٹی کا مؤقف ہے کہ رینجرز کے اختیارات کو صرف کراچی تک محدود کرنا مجرمانہ سرگرمیوں کو روکنے کے لیے کافی نہیں ہوگا۔ اس کے بجائے، ایم کیو ایم کا اصرار ہے کہ رینجرز کو صوبے بھر میں بااختیار بنایا جانا چاہیے تاکہ قانون کے نفاذ کے لیے ایک جامع طریقہ کار کو یقینی بنایا جا سکے۔

مزید برآں، ایم کیو ایم کے رہنماؤں نے پولیس کو اپنی صفوں میں بدعنوانی اور نا اہلی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ وہ دلیل دیتے ہیں کہ پولیس فورس کے اندر جرائم پیشہ عناصر اور بعض عناصر کے درمیان تعاون جرائم سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کی کوششوں کو روکتا ہے۔ اس لیے ایم کیو ایم کا مؤقف ہے کہ سندھ میں دیرپا امن و سلامتی کے حصول کے لیے پولیس فورس کے اندرونی مسائل کا حل ضروری ہے۔

آخر میں، ایم کیو ایم اور سندھ حکومت کے درمیان الزامات اور جوابی الزامات خطے میں سیاست اور قانون کے نفاذ کی پیچیدہ حرکیات کو نمایاں کرتے ہیں۔ رینجرز کے کردار اور اختیارات پر بحث سندھ میں سیکیورٹی کو برقرار رکھنے اور جرائم سے نمٹنے کے چیلنجوں کی نشاندہی کرتی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *