سونیا شمروز نے خیبرپختونخوا کی پہلی خاتون اسسٹنٹ انسپکٹر جنرل آف پولیس کے طور پر تاریخ رقم کردی

سونیا شمروز نے صوبہ خیبر پختونخواہ میں اسسٹنٹ انسپکٹر جنرل آف پولیس (اے آئی جی) کے طور پر تعینات ہونے والی پہلی خاتون بن کر پاکستان کے خیبر پختونخوا میں شیشے کی ایک اہم چھت کو توڑ دیا ہے۔ ایبٹ آباد ضلع سے تعلق رکھنے والی، سونیا کا ایک ممتاز کیریئر ہے، جس نے پولیس فورس میں مختلف عہدوں پر خدمات انجام دیں، بشمول چترال اور باجوڑ کے لیے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر (DPO)۔

انٹرنیشنل ایسوسی ایشن آف ویمن پولیس (IAWP) نے سونیا شمروز کو ان کی شاندار کامیابیوں پر نوازا، جس سے وہ یہ باوقار اعزاز حاصل کرنے والی پہلی مسلمان خاتون بن گئیں۔ اے آئی جی کے طور پر ان کی تقرری نہ صرف ان کے کیریئر میں بلکہ صوبے کی تاریخ میں بھی ایک سنگ میل کی حیثیت رکھتی ہے، جو خواتین کی صلاحیتوں کی بڑھتی ہوئی شناخت اور قانون نافذ کرنے والے اداروں میں ان کے کردار کو اجاگر کرتی ہے۔

سونیا نے پولیس فورس میں خواتین کے لیے مساوی مواقع کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے، اپنے نئے کردار میں خدمات انجام دینے کے موقع پر اظہار تشکر کیا۔ انہوں نے کہا کہ خیبرپختونخوا میں خواتین افسران کو اب وہی حقوق اور ذمہ داریاں مل رہی ہیں جو ان کے مرد ہم منصبوں کی طرح ہیں، جس میں میرٹ ہی انتخاب کا واحد معیار ہے۔

سونیا نے صوبے میں معاون کام کرنے والے ماحول پر روشنی ڈالی، جسے اس نے اپنے کیریئر میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کا سہرا دیا۔ ڈیوٹی کے تئیں اس کی لگن اور وابستگی نے اسے قومی اور بین الاقوامی اعزازات سے نوازا ہے، خاص طور پر جبری شادیوں اور خواتین کے خلاف تشدد کے خلاف اس کی کوششوں کے لیے، جو خطے میں اہم تشویش کا باعث ہیں۔

انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبر پختونخواہ احتشام خان نے سونیا کی تقرری کو سراہتے ہوئے کہا کہ صوبہ خواتین پولیس افسران اور عملے کی شمولیت کو فعال طور پر فروغ دے رہا ہے۔ گزشتہ سال کے دوران، خواتین افسران کی بھرتی میں نمایاں اضافہ ہوا ہے، جو پولیس فورس کے اندر صنفی مساوات کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔

احتشام خان نے خواتین پولیس افسران اور عملے کے حوصلے بلند کرنے کی اہمیت پر زور دیا، اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ وہ بہترین اور پیشہ ورانہ مہارت کے ساتھ اپنے فرائض سرانجام دے رہی ہیں۔ انہوں نے سونیا اور دیگر خواتین افسران کی لگن کے لیے ان کی تعریف کی اور ان پر زور دیا کہ وہ خیبر پختونخواہ میں قانون نافذ کرنے والی خواتین افسران کی آئندہ نسلوں کے لیے رول ماڈل کے طور پر خدمات انجام دیں۔

اے آئی جی کے طور پر سونیا کی تقرری نہ صرف ایک ذاتی کامیابی ہے بلکہ یہ خیبر پختونخواہ میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے بدلتے ہوئے منظر نامے کا بھی ثبوت ہے، جہاں خواتین کو پولیس فورس میں ان کے تعاون کے لیے تیزی سے پہچانا اور قدر کی نگاہ سے دیکھا جا رہا ہے۔ ان کی تاریخی تقرری صوبے اور اس سے باہر کی خواتین کے لیے ایک تحریک کا کام کرتی ہے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ عزم اور استقامت کے ساتھ، صنف سے قطع نظر، کوئی بھی مقصد حاصل کیا جا سکتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *