جنوبی افریقا کا عالمی عدالت سے اسرائیلی قبضے کو غیر قانونی قرار دینے کا مطالبہ کر دیا

جنوبی افریقہ نے ایک اہم پیش رفت کرتے ہوئے عالمی عدالت انصاف پر زور دیا ہے کہ وہ فلسطینی علاقوں پر اسرائیل کے قبضے کو غیر قانونی قرار دے۔ یہ کال بڑھتے ہوئے تشدد کے درمیان سامنے آئی ہے، جب کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں شمالی غزہ میں اسرائیلی حملوں کی وجہ سے صحافیوں سمیت 100 سے زائد فلسطینیوں کی المناک موت دیکھنے میں آئی ہے۔

بین الاقوامی عدالت انصاف میں ہونے والی سماعت نے فلسطینی زمینوں پر اسرائیل کے 57 سالہ قبضے پر روشنی ڈالی، جس میں اسرائیل کی طرف سے فلسطینیوں کے حقوق سے مسلسل انکار اور بین الاقوامی قوانین کو نظر انداز کرنے پر زور دیا گیا، خاص طور پر غزہ میں واضح۔

سماعت میں جنوبی افریقہ کے نمائندوں نے بین الاقوامی عدالت انصاف کی فوری ضرورت پر زور دیا کہ وہ اسرائیل کے قبضے کو غیر قانونی قرار دے، جو بہت سی اقوام اور انسانی حقوق کی تنظیموں کے جذبات کے مطابق ہے۔

دوسری جانب اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو، جنہیں اس وقت جاری تنازعے کے چیلنجز کا سامنا ہے، نے قیدیوں کی رہائی کے لیے حماس کی شرائط کو مسترد کر دیا ہے۔ نیتن یاہو نے کہا کہ جب کہ جنگ کو ختم کرنے اور اپنے مقاصد کے حصول کے لیے اندرونی اور بیرونی دباؤ ہیں، وہ قیدیوں کی رہائی کے لیے حماس کی شرائط پر متفق نہیں ہو سکتے، کیونکہ ایسا کرنے کا مطلب حماس کے مطالبات کو تسلیم کرنا ہوگا۔

مزید برآں، اسرائیلی وزیر انٹیلی جنس زیف ایلکن نے نیتن یاہو کے موقف کی بازگشت کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل قیدیوں کی رہائی کے لیے کسی بھی قیمت پر بات چیت نہیں کرے گا۔ یہ مضبوط موقف تنازعہ کے پرامن حل کے لیے بین الاقوامی مطالبات کے باوجود اسرائیل کے اپنے مؤقف سے وابستگی کی نشاندہی کرتا ہے۔

صورت حال بدستور کشیدہ ہے، دونوں فریقوں نے سمجھوتہ کرنے پر بہت کم آمادگی ظاہر کی ہے۔ عالمی برادری تنازعات کے پرامن حل اور فلسطینی عوام کے مصائب کے خاتمے کی امید کے ساتھ پیشرفت پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

طلال چوہدری کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر تنقید، دعویٰ یہ سیاسی استحکام کو نقصان پہنچاتا ہے

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے مخصوص نشستوں کے حوالے سے حالیہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *