سپریم کورٹ کمیشن فارم 45 کی بنیاد پر انتخابی نتائج کا فیصلہ کرے گا: حافظ نعیم

جماعت اسلامی کے رہنما حافظ نعیم الرحمن نے شفاف طریقے سے نتائج مرتب کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے فارم 45 کی بنیاد پر انتخابی نتائج کا فیصلہ کرنے کے لیے سپریم کورٹ کمیشن کی تشکیل کا مطالبہ کیا ہے۔ کراچی پریس کلب میں خطاب کرتے ہوئے نعیم نے 16 سال سے اقتدار میں رہنے والی پیپلز پارٹی پر تنقید کرتے ہوئے الزام لگایا کہ وہ صنعتوں کو گیس فراہم نہیں کر رہی، ان کی ترقی میں رکاوٹ ہے اور برآمدات کو متاثر کر رہی ہے۔ انہوں نے مزید الزام لگایا کہ پیپلز پارٹی غیر آئینی طریقوں سے اقتدار میں آئی ہے۔

نعیم نے ایم کیو ایم، مسلم لیگ (ن) اور پی پی پی کو متنبہ کیا کہ جو لوگ اپنی مرضی دوسروں پر مسلط کرنے کی کوشش کرتے ہیں انہیں نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا، کیونکہ وہ اختیارات کو جائز طریقے سے منتقل نہیں کررہے ہیں۔ انہوں نے پیپلز پارٹی، مسلم لیگ اور ایم کیو ایم سے مطالبہ کیا کہ وہ فارم 45 کے نتائج کو تسلیم کریں اور سپریم کورٹ کمیشن کو انتخابی نتائج کو شفاف طریقے سے ترتیب دینے کی اجازت دیں۔

انہوں نے مسلم لیگ (ن) کی سیاست کو بھی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ان کی تصادم کی پالیسی ختم ہو گئی ہے کیونکہ ایک بھائی وزیر اعظم اور دوسرا نائب وزیر اعظم بن گیا ہے جس سے آئین کو خطرے میں ڈال دیا گیا ہے۔

نعیم نے زور دے کر کہا کہ وہ تصادم کی پالیسی کی وکالت نہیں کرتے لیکن قوم کو مسائل سے نکال کر رہنمائی کرسکتے ہیں۔ انہوں نے ان لوگوں کے احتجاج کو جو پی ٹی آئی کا حصہ تھے اور اب احتجاج کو بلاجواز قرار دیا۔

انہوں نے یہ کہتے ہوئے نتیجہ اخذ کیا کہ اگر لوگ اپنی غلطیوں کو تسلیم کرتے ہیں تو وہ حل فراہم کر سکتے ہیں، اور ان کی پارٹی وہ کرے گی جو وہ ایک سیاسی جماعت کے طور پر اپنی صلاحیت کے اندر کر سکتے ہیں۔

سپریم کورٹ کمیشن کا مطالبہ پاکستان میں بڑھتی ہوئی سیاسی کشیدگی کے درمیان آیا ہے۔ انتخابی شفافیت کا مسئلہ ایک متنازعہ رہا ہے، جس میں مختلف جماعتوں نے گزشتہ انتخابات میں دھاندلی اور ہیرا پھیری کا الزام لگایا ہے۔

کمیشن کا مطالبہ انتخابی عمل کی سالمیت اور جمہوری نظام میں احتساب اور شفافیت کی ضرورت کے بارے میں وسیع تر تشویش کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ منصفانہ اور آزادانہ انتخابات کو یقینی بنانے کے لیے آزاد نگرانی اور عدالتی جائزے کی اہمیت کو بھی اجاگر کرتا ہے۔

جیسے جیسے پاکستان میں سیاسی صورتحال بدلتی جا رہی ہے، سپریم کورٹ کمیشن کا مطالبہ ملک کے جمہوری عمل پر دور رس اثرات کے ساتھ ایک اہم پیش رفت ہو سکتا ہے۔ یہ دیکھنا باقی ہے کہ حکومت اور دیگر سیاسی جماعتیں اس مطالبے کا کیا جواب دیں گی اور کیا اس سے انتخابی نظام میں کوئی ٹھوس تبدیلی آئے گی۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *