چیف جسٹس نے ممنوعہ اسلحے کے لائسنس کا جائزہ لے لیا.

چیف جسٹس نے ملک بھر میں ممنوعہ اسلحے کے لائسنس کے اجراء کا جامع جائزہ لینے پر زور دیا۔ انہوں نے پاکستان میں رائج کلاشنکوف کلچر کو ختم کرنے کی ضرورت پر زور دیا، ان مثالوں کا حوالہ دیتے ہوئے جہاں لوگ کھلے عام اسکولوں اور بازاروں میں آتشیں اسلحہ لے کر جاتے ہیں، جس سے خوف و ہراس کا ماحول پیدا ہوتا ہے۔ یہ ریمارکس چوری کے ایک مقدمے کی سماعت کے دوران کہے جس میں ملزم نے پچاس ہزار روپے جرمانہ ادا کر کے ضمانت حاصل کر لی۔

دو کلاشنکوف، دو کلاکوف اور ایک پستول کی چوری پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے چیف جسٹس نے انہیں کلاشنکوف کا لائسنس حاصل کرنے پر زور دیتے ہوئے مسلسل پیشکشوں پر روشنی ڈالی۔ اس نے منشیات اور کلاشنکوفوں کے پھیلاؤ کے درمیان تعلق پیدا کیا، اور ان کو پاکستان میں بڑے پیمانے پر خلل ڈالنے کی وجہ قرار دیا۔ چیف جسٹس نے تمام کلاشنکوف لائسنسوں کی منسوخی کی وکالت کی اور لوگوں کو مشورہ دیا کہ اگر وہ ممکنہ تشدد کا خدشہ ہے تو گھروں میں رہیں۔ انہوں نے چوری شدہ ہتھیاروں کے لائسنسوں کی انکوائری شروع کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

مزید برآں چیف جسٹس نے کلاشنکوف کے لائسنس کے اجرا میں سہولت فراہم کرنے والوں کے خلاف کارروائی نہ ہونے پر سوالات اٹھائے۔ انہوں نے واضح طور پر ان افراد کے مسئلے پر توجہ دی جو رنگ برنگی کھڑکیوں والی بڑی گاڑیوں میں چھپائے گئے ہتھیار لے جاتے ہیں۔ چیف جسٹس نے سیکرٹری داخلہ کو تمام صوبوں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں سے خط و کتابت کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے تمام کلاشنکوفیں اور ان سے منسلک لائسنس واپس لینے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کلاشنکوف لے جانے والے افراد سے پوچھ گچھ کرنے میں پولیس کی ہچکچاہٹ پر عدم اطمینان کا اظہار کیا اور چوری شدہ ہتھیاروں کے لائسنسوں کی تحقیقات کی عدم موجودگی پر تنقید کی۔

ان خدشات کے جواب میں سپریم کورٹ نے باضابطہ طور پر ملک بھر میں ممنوعہ ہتھیاروں کے لائسنس کے اجراء سے متعلق تفصیلی معلومات کی درخواست کی ہے۔ سیکرٹری داخلہ، تمام صوبائی ہوم سیکرٹریز اور انسپکٹر جنرلز آف پولیس کو نوٹس جاری کر دیے گئے ہیں۔ مزید برآں، اٹارنی جنرل اور صوبائی ایڈووکیٹ جنرلز کو احکامات کی کاپیاں گردش کرنے کی ہدایت کی گئی ہے، درست لائسنس کے بغیر ہتھیار رکھنے کی غیر قانونییت کو دہراتے ہوئے اور چوری شدہ ہتھیاروں کے لائسنسوں کے کیسز کی مکمل تحقیقات کے لیے ضروری پر زور دیا گیا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

طلال چوہدری کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر تنقید، دعویٰ یہ سیاسی استحکام کو نقصان پہنچاتا ہے

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے مخصوص نشستوں کے حوالے سے حالیہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *