ماسکو حملے میں ہلاکتوں کی تعداد 143 ہو گئی اور زخمی افعاد 120 ہو گئے

ماسکو کے مضافاتی علاقے میں ایک کنسرٹ ہال کو تباہ کن حملے کا نشانہ بنایا گیا، جس کے نتیجے میں 143 افراد ہلاک اور 120 سے زائد افراد زخمی ہوئے۔ اس حملے نے روس اور بین الاقوامی برادری کے ذریعے صدمے کی لہریں بھیجی ہیں، جس کی فوری مذمت اور اظہار یکجہتی کا باعث بنی۔

روسی حکام نے حملے کے سلسلے میں 11 افراد کی گرفتاری کی تصدیق کی ہے۔ مزید برآں، رپورٹس بتاتی ہیں کہ دو مشتبہ افراد کو یوکرین کی سرحد کے قریب سے پکڑا گیا ہے، حالانکہ روسی حکام کی جانب سے سرکاری تصدیق ابھی باقی ہے۔ مبینہ طور پر تین دہشت گردوں کے طور پر بیان کیے گئے مجرموں نے پرہجوم کنسرٹ ہال میں گھس کر فائرنگ شروع کر دی اور دھماکہ خیز مواد بھی پھینکا۔ اس کے نتیجے میں ہونے والی افراتفری کے نتیجے میں ہال کی چھت کا ایک حصہ گر گیا، متعدد حاضرین پھنس گئے اور مزید زخمی ہوئے۔

روسی حکام نے صدر ولادیمیر پوتن کو واقعے کے بارے میں بریفنگ دی، جنہوں نے حملے اور جوابی کارروائیوں کی تفصیلات فراہم کیں۔ کریملن نے مجرموں کو انصاف کے کٹہرے میں لانے اور اپنے شہریوں کی حفاظت اور حفاظت کو یقینی بنانے کا عزم کیا ہے۔

اس حملے کے تناظر میں پاکستان کے وزیر اعظم شہباز شریف اور چینی صدر شی جن پنگ دونوں نے تشدد پر تعزیت اور مذمت کا اظہار کیا۔ شریف نے جانوں کے ضیاع پر افسوس کا اظہار کیا اور اس مشکل وقت میں روس کے ساتھ پاکستان کی یکجہتی کا اظہار کیا۔ شی جن پنگ نے دہشت گردی کے خلاف چین کے موقف کا اعادہ کیا اور قومی سلامتی اور استحکام کو برقرار رکھنے کے لیے روس کی کوششوں کی حمایت کا وعدہ کیا۔

دریں اثنا، وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کے مشیر جان کاربی نے حملے کی مذمت کی اور روسی حکام کو مدد کی پیشکش کی۔ کاربی نے واضح کیا کہ ابتدائی معلومات نے اس حملے میں یوکرین سے تعلق رکھنے والے افراد کے ملوث ہونے کی نشاندہی نہیں کی، جس سے اس سلسلے میں کسی بھی قسم کی قیاس آرائیاں ختم ہو گئیں۔ ماسکو میں امریکی سفارت خانے نے حملے سے قبل امریکی شہریوں کو وارننگ جاری کی تھی اور انہیں مشورہ دیا تھا کہ وہ ممکنہ سکیورٹی خطرات کے پیش نظر واقعے کے دن کنسرٹ ہال سے گریز کریں۔

اس حملے نے دہشت گردی اور سلامتی کے بارے میں خدشات کو پھر سے جنم دیا ہے، جس سے اقوام کے درمیان چوکسی اور تعاون میں اضافہ کرنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ اس المناک واقعے کے بعد عالمی برادری نے روس کی حمایت اور یکجہتی کی پیشکش کی ہے۔ جیسے جیسے تحقیقات جاری ہیں اور نقصان کی مکمل حد واضح ہو جاتی ہے، مستقبل میں ایسے مظالم کو روکنے کی کوششیں تیز ہونے کی توقع ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *