الیکشن کمیشن کی طرف سے قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی مخصوص نشستوں کی درخواست کو مسترد

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے سنی اتحاد کونسل کی جانب سے قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی مخصوص نشستوں کی درخواست کو مسترد کرنے کے فیصلے کے پاکستان کے سیاسی منظر نامے پر اہم مضمرات ہیں۔ کونسل، سنی مسلمانوں کی نمائندگی کرنے والا ایک ممتاز سیاسی گروپ، کو 77 مخصوص نشستوں کے بغیر چھوڑ دیا گیا ہے جو اسے انتخابی عمل کے ذریعے حاصل کرنے کی امید تھی۔

یہ فیصلہ کونسل کے لیے ایک دھچکے کے طور پر سامنے آیا ہے، جو ملک کے قانون ساز اداروں میں نمائندگی کے لیے کوشاں تھی۔ الیکشن کمیشن کے اس فیصلے کا مؤثر مطلب یہ ہے کہ اب یہ نشستیں دیگر سیاسی جماعتوں کو دی جائیں گی، جس سے اسمبلیوں میں طاقت کے توازن کو ممکنہ طور پر تبدیل کیا جائے گا۔

ان نشستوں سے کونسل کے اخراج سے قومی اور صوبائی سطحوں پر پالیسی اور فیصلہ سازی پر اثر انداز ہونے کی صلاحیت پر اثرات مرتب ہوں گے۔ اسمبلیوں میں نمائندگی سے انکار کر کے، کونسل کو سیاسی نظام میں اپنے مفادات اور ترجیحات کی وکالت کرنا مشکل ہو سکتا ہے۔

اس فیصلے کا ایک اہم پہلو اس کا اسمبلیوں میں خواتین اور اقلیتوں کی نمائندگی پر پڑنے والا اثر ہے۔ کونسل کے اخراج کا مطلب یہ ہے کہ قومی اسمبلی میں خواتین اور اقلیتوں کے لیے 23 مخصوص نشستیں اب دیگر جماعتوں کو دی جائیں گی۔ اس سے اسمبلیوں میں ان گروہوں کی نمائندگی اور پاکستان کے سیاسی نظام میں شمولیت کے وسیع تر مسئلے کے بارے میں تشویش پیدا ہوتی ہے۔

قومی اسمبلی میں، کونسل کا اخراج خواتین کے لیے 20 مخصوص نشستوں کے نقصان کا ترجمہ ہے، جن میں پنجاب سے 12 اور خیبر پختونخوا سے 8، نیز اقلیتوں کے لیے 3 مخصوص نشستیں شامل ہیں۔ پنجاب اسمبلی میں کونسل کو خواتین کے لیے 24 اور اقلیتوں کے لیے 3 مخصوص نشستیں نہیں ملیں گی۔ خیبرپختونخوا اسمبلی میں کونسل کو خواتین کی 21 اور اقلیتوں کی 4 مخصوص نشستیں نہیں ملیں گی۔ مزید برآں، انہیں سندھ اسمبلی میں خواتین کی 2 مخصوص نشستیں نہیں ملیں گی۔

امکان ہے کہ یہ فیصلہ کونسل کے سیاسی عزائم کے لیے ایک دھچکا ہے اور ممکنہ طور پر اس کے دیگر سیاسی جماعتوں کے ساتھ تعلقات کشیدہ ہو سکتے ہیں۔ یہ دیکھنا باقی ہے کہ کونسل اس فیصلے پر کیا ردعمل ظاہر کرے گی اور کیا وہ اسے قانونی یا سیاسی طریقوں سے چیلنج کرنے کی کوشش کرے گی۔

مجموعی طور پر، کونسل کی مخصوص نشستوں کے بارے میں الیکشن کمیشن کا فیصلہ پاکستان کے سیاسی منظر نامے کی پیچیدہ نوعیت اور ملک کے قانون ساز اداروں میں نمائندگی کے حصول کے لیے سیاسی جماعتوں کو درپیش چیلنجوں کی نشاندہی کرتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *