شوکت صدیقی کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا گیا

اسلام آباد ہائی کورٹ کے سابق جج شوکت عزیز صدیقی کی برطرفی کے خلاف اپیل کے حوالے سے سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلے نے آئینی توازن اور عدالتی عمل پر بحث چھیڑ دی ہے۔ 23 جنوری 2024 کو ویب ڈیسک ٹائم کی رپورٹ کے مطابق، عدالت نے، چیف جسٹس پاکستان، جسٹس فائز عیسیٰ کی سربراہی میں، ایک سماعت کی جس میں کیس کے اہم پہلوؤں پر توجہ دی گئی۔

اپیل میں خواجہ حارث کی نمائندگی کرنے والے لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) فیض حمید اور شوکت صدیقی کی نمائندگی کرنے والے حماد خان شامل تھے۔ چیف جسٹس نے استفسار کرتے ہوئے کارروائی کا آغاز کیا کہ شوکت صدیقی نے الزامات کو تسلیم کیا یا تردید؟ خواجہ حارث نے فوری جواب دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اپنے موکل پر لگائے گئے تمام الزامات کو واضح طور پر مسترد کردیا۔

شوکت صدیقی کے وکیل حماد خان نے لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) فیض حمید کے الزامات کا جواب دیتے ہوئے سپریم جوڈیشل کونسل کی طرف سے کی جانے والی عدالتی تحقیقات کی ضرورت پر زور دیا۔ خان کے مطابق یہ انکوائری شوکت صدیقی کے خلاف لگائے گئے الزامات کی چھان بین کا موقع فراہم کرے گی، خاص طور پر لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) فیض حمید کی طرف سے لگائے گئے الزامات۔

چیف جسٹس فائز عیسیٰ نے اس معاملے پر بات کرتے ہوئے سوال کیا کہ کیا انکوائری ہوئی؟ ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے واضح کیا کہ جب شوکت صدیقی نے رپورٹ پیش کی تو کوئی انکوائری نہیں ہوئی۔ چیف جسٹس نے منصفانہ اور شفاف انکوائری کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے غیر ثابت شدہ الزامات کی بنیاد پر جج کو ہٹانے کی صورت میں عدلیہ کی ساکھ پر ممکنہ اثرات پر تشویش کا اظہار کیا۔

عدالت نے سپریم جوڈیشل کونسل کے آئینی اختیار کے بارے میں تفصیلی بحث کی اور جامع انکوائری کے لیے جوڈیشل کمیشن کی تشکیل کے امکانات کا جائزہ لیا۔ چیف جسٹس فائز عیسیٰ نے ایسے کمیشن کی ضرورت پر سوالات اٹھائے اور سپریم کورٹ کے منصفانہ تحقیقات کے اختیارات کو اجاگر کیا۔

اس کارروائی سے کیس کی مدت، منصفانہ ٹرائل کے حق اور شوکت صدیقی کی پیشہ ورانہ ساکھ پر ممکنہ اثرات کے بارے میں خدشات سامنے آئے۔ عدالت نے آئینی سالمیت کو برقرار رکھنے کے لیے درکار نازک توازن اور محتاط اندازِ فکر کی اہمیت کو تسلیم کیا۔

عدالت نے دونوں فریقین کے دلائل مکمل ہونے تک اپیل پر فیصلہ محفوظ رکھنے کا فیصلہ کیا۔ یہ کیس آئینی اداروں کے درمیان مداخلت، مکمل انکوائری کی ضرورت اور شوکت صدیقی کے عدالتی کیریئر پر ممکنہ طویل مدتی اثرات کے بارے میں اہم سوالات اٹھاتا ہے۔ حتمی فیصلہ آنے والے سالوں کے لیے عدالتی کارروائیوں کے منظر نامے کو تشکیل دے سکتا ہے، جو انصاف کے حصول میں قانونی عمل کی پیچیدہ اور پیچیدہ نوعیت کو اجاگر کرتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

مسلم لیگ ن کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس: شہباز شریف قائم مقام پارٹی صدر مقرر

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے اندر ایک اہم پیش رفت میں، …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *