ملک بھرکی عدالتوں میں زیر التوا مقدمات کی تعداد 22 لاکھ 60 ہزارتک ہے

ملک بھر میں 2.26 ملین مقدمات زیر التوا ہونے کے ساتھ پاکستان کے عدالتی نظام کو ایک اہم پسماندگی کا سامنا ہے۔ یہ اعداد و شمار پاکستان کے لاء اینڈ جسٹس کمیشن کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ میں سامنے آئے ہیں، جس میں جولائی سے دسمبر 2023 کے عرصے کا احاطہ کیا گیا ہے۔

رپورٹ میں عدلیہ کے مختلف درجوں کے اعدادوشمار شامل ہیں، بشمول سپریم کورٹ، شرعی عدالتیں، تمام ہائی کورٹس، اور ضلعی عدالتیں۔ یہ گزشتہ مدت کے مقابلے میں زیر التواء مقدمات میں 3.9 فیصد اضافے کی نشاندہی کرتا ہے، ضلعی عدالتوں میں 1.86 ملین مقدمات اور اعلیٰ عدالتوں میں 400,000 مقدمات ہیں۔

کل زیر التوا مقدمات میں سے 82% ضلعی عدالتوں میں ہیں جبکہ باقی 18% اعلیٰ عدالتوں میں ہیں۔ جولائی سے دسمبر 2023 کی مدت کے دوران، 2.38 ملین نئے کیسز دائر کیے گئے، اور اتنی ہی تعداد میں کیسز کو نمٹا دیا گیا، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ کیسز کے بوجھ کو سنبھالنے کے مشکل کام ہیں۔

رپورٹ میں مزید روشنی ڈالی گئی ہے کہ ہائی کورٹس میں زیر التوا مقدمات میں سے 81% سول مقدمات ہیں جو ایک پیچیدہ قانونی منظر نامے کی عکاسی کرتے ہیں۔ یہ بیک لاگ عدالتی نظام کے لیے ایک سنگین چیلنج ہے، جس سے انصاف کی بروقت فراہمی متاثر ہوتی ہے اور قانون کی حکمرانی کو نقصان پہنچتا ہے۔

اس مسئلے کو حل کرنے کی کوششوں میں کیس مینجمنٹ تکنیک کا نفاذ، عدالتی کارکردگی میں اضافہ، اور قانونی عمل کو ہموار کرنے کے لیے ممکنہ اصلاحات شامل ہیں۔ تاہم، اتنے بڑے پسماندگی سے نمٹنے کے لیے نظام انصاف میں شامل تمام اسٹیک ہولڈرز کی جانب سے مشترکہ کوشش کی ضرورت ہے۔

پاکستان کے عدالتی نظام میں مقدمات کا بیک لاگ نہ صرف انصاف کی بروقت فراہمی میں رکاوٹ ہے بلکہ اس کے وسیع تر سماجی اثرات بھی ہیں۔ تاخیر سے انصاف کی فراہمی قانونی چارہ جوئی میں مایوسی کا باعث بن سکتی ہے، قانونی نظام پر اعتماد کو ختم کر سکتی ہے اور استثنیٰ کے احساس میں حصہ ڈال سکتی ہے۔ یہ افراد اور کاروباری اداروں کو قانونی سہارا لینے، اقتصادی سرگرمیوں اور ترقی میں رکاوٹ ڈالنے سے بھی روک سکتا ہے۔ اس پسماندگی کو حل کرنے کے لیے نہ صرف طریقہ کار میں اصلاحات کی ضرورت ہے بلکہ ایک جامع نقطہ نظر کی بھی ضرورت ہے جس میں ججوں کی تعداد میں اضافہ، عدالت کے بنیادی ڈھانچے کو بہتر بنانا، اور تنازعات کے حل کے متبادل طریقہ کار کو فروغ دینا شامل ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

وزیراعلیٰ پنجاب کا فرانزک ٹریننگ لیب کو یونیورسٹیوں کے ساتھ شراکت کرنے کا حکم

صوبے میں فرانزک سائنس کی تعلیم اور صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے ایک اہم اقدام …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *