پارٹی کا کابینہ میں نہ بیٹھنا حکومت کیلئے رسک ہوگا، خواجہ آصف

پیپلز پارٹی نے کابینہ میں شامل نہ کیے جانے پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی عدم موجودگی حکومت کے استحکام کے لیے خطرہ بن سکتی ہے۔ مسلم لیگ (ن) کے رہنما خواجہ آصف نے کابینہ میں پی پی پی کی موجودگی کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے تجویز پیش کی کہ اگر نشست نہ دی گئی تو پارٹی ممکنہ طور پر اندر سے حکومت کو کمزور کر سکتی ہے۔
خواجہ آصف نے نواز شریف کے شہباز شریف کو وزارت عظمیٰ کی امیدواری کے لیے نامزد کرنے کے فیصلے پر روشنی ڈالی، شریف خاندان کے دیگر سیاسی جماعتوں کے ساتھ مذاکرات کا تجربہ نہ ہونے کا حوالہ دیا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ پارٹی کے اندر نواز شریف کی اتھارٹی فیصلہ کن رہتی ہے۔
خواجہ آصف نے پی ٹی آئی حکومت پر اہم مسائل کو نظر انداز کرنے کا الزام بھی لگایا، اور دعویٰ کیا کہ پی پی پی نے پہلے پی ٹی آئی کو اقتصادی چارٹر تجویز کیا تھا، جسے حکمران جماعت نے مسترد کر دیا تھا۔ انہوں نے حکومت کی جانب سے بجلی کی چوری سے نمٹنے کے طریقہ کار پر مزید نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ بجلی کی چوری کی بلند شرح والے علاقوں میں یوٹیلیٹیز کی لاگت کو بڑھانے کی ضرورت ہوگی جب تک کہ اس مسئلے کو مؤثر طریقے سے حل نہیں کیا جاتا۔
پاکستان کی انتخابی تاریخ پر غور کرتے ہوئے، آصف نے آنے والے انتخابات کے منصفانہ ہونے کے بارے میں تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے، متنازعہ انتخابات کے رجحان کو نوٹ کیا۔ انہوں نے مختلف صوبوں میں انتخابی دھاندلی کے الزامات کی نشاندہی کی اور خیبرپختونخوا میں انتخابی نتائج کے حوالے سے پی ٹی آئی کی خاموشی کو اجاگر کیا، جہاں پارٹی کو شکست کا سامنا کرنا پڑا۔
خواجہ آصف نے پی ٹی آئی کے ساتھ رابطہ قائم کرنے کی کوششوں کا بھی ذکر کیا، جو بات چیت میں شامل ہونے پر آمادگی کا اشارہ ہے۔ انہوں نے مولانا فضل الرحمان کی سیاسی اہمیت کو تسلیم کیا، قائد کے روکھے انداز اور اپوزیشن میں رہنے کے بجائے تحریک میں شامل ہونے کی دعوت کو نوٹ کیا۔ مجموعی طور پر، آصف کے ریمارکس نے پاکستان کے سیاسی منظر نامے کو درپیش پیچیدہ حرکیات اور چیلنجوں کی نشاندہی کی۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

مسلم لیگ ن کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس: شہباز شریف قائم مقام پارٹی صدر مقرر

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے اندر ایک اہم پیش رفت میں، …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *