پی ٹی آئی نے ججز کے خطوط کی تحقیقات کے لیے انکوائری کمیشن کی تشکیل کو چیلنج کر دیا

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے ججز کے خطوط کی تحقیقات کے لیے انکوائری کمیشن کی تشکیل کو چیلنج کرتے ہوئے تنازعہ کھڑا کر دیا ہے، جس میں کمیشن کی سربراہی کے لیے سابق چیف جسٹس تصدق حسین جیلانی کی تقرری پر تشویش کا اظہار کیا گیا ہے۔ وفاقی کابینہ کی جانب سے جیلانی اور دیگر پر مشتمل کمیشن کی تشکیل کے فیصلے نے تحریک انصاف کی جانب سے بحث اور تنقید کو جنم دیا ہے جس نے اس اقدام کو مسترد کر دیا ہے۔

وفاقی کابینہ کی جانب سے انکوائری کمیشن کی منظوری اسلام آباد ہائی کورٹ کے چھ ججوں کی جانب سے عدالتی امور میں مداخلت کے الزامات کے خط جمع کرانے کے بعد دی گئی۔ کمیشن کے مینڈیٹ میں ان خطوط میں لگائے گئے الزامات کی چھان بین، ان کی درستگی کی تصدیق، اور اس بات کا تعین کرنا شامل ہے کہ آیا کوئی اہلکار مبینہ مداخلت میں ملوث تھا۔

جیلانی کی کمیشن کے سربراہ کے طور پر تقرری پر پی ٹی آئی کے اعتراضات ہیں۔ پی ٹی آئی رہنما شہزاد مرزا کے مطابق جیلانی کی تقرری کا حکومتی فیصلہ کمیشن کی غیر جانبداری اور شفافیت پر تشویش کا باعث ہے۔ مرزا نے اس طرح کی تقرریوں سے پہلے تمام اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے مکمل اور غیر جانبدارانہ تحقیقات کی ضرورت پر زور دیا۔

پی ٹی آئی کی جانب سے کمیشن کی تشکیل کو چیلنج کرنے کے اعلان سے کمیشن کے گرد تنازع مزید گہرا ہوگیا ہے۔ پی ٹی آئی کا کمیشن کو چیلنج کرنے کا فیصلہ تحقیقاتی عمل میں شفافیت اور انصاف کو یقینی بنانے کے اس کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔ پارٹی کا موقف ججوں کے خطوط کی معتبر اور آزادانہ انکوائری کی ضرورت پر زور دیتا ہے، کسی بھی تعصب یا اثر و رسوخ سے پاک۔

دوسری جانب وفاقی حکومت نے سابق چیف جسٹس کے طور پر جیلانی کے تجربے اور ساکھ کا حوالہ دیتے ہوئے اپنے فیصلے کا دفاع کیا ہے۔ حکومت نے جیلانی کی کمیشن کی موثر اور غیر جانبداری سے قیادت کرنے کی صلاحیت پر اعتماد کا اظہار کیا ہے۔ تاہم، پی ٹی آئی کے اعتراضات کمیشن کی ساکھ اور حکومت کے حالات سے نمٹنے کے بارے میں سوال اٹھاتے ہیں۔

انکوائری کمیشن کی تشکیل سے متعلق تنازعہ عدلیہ میں شفافیت اور احتساب کو یقینی بنانے کے چیلنجوں کو اجاگر کرتا ہے۔ اس تنازعہ کا نتیجہ نہ صرف ججوں کے خطوط کی تحقیقات پر اثرانداز ہو گا بلکہ عدالتی امور میں مستقبل کی انکوائریوں کے لیے بھی ایک مثال قائم کرے گا۔ جیسا کہ بحث جاری ہے، پی ٹی آئی اور حکومت دونوں کو اس مسئلے کو حل کرنے میں انصاف، شفافیت اور احتساب کے اصولوں کو برقرار رکھنے کی کوشش کرنی چاہیے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *