بلدیاتی اداروں کی وجہ سے کراچی کی سڑکیں صاف ہوئی ہیں .میئر مرتضیٰ وہاب

میڈیا سے حالیہ گفتگو میں کراچی کے میئر مرتضیٰ وہاب نے شہر کی سڑکوں سے پانی صاف کرنے کی کوششوں کو سہرا دیتے ہوئے بلدیاتی اقدامات کے مثبت نتائج کو اجاگر کیا۔ نعیم الرحمٰن اور مصطفی کمال سمیت مختلف شعبوں کو درپیش متنوع چیلنجز پر گفتگو کرتے ہوئے وہاب نے مشکلات کے باوجود جاری کام پر زور دیا۔

خاص طور پر ایم اے جناح روڈ اور آئی آئی کا ذکر کرنا۔ چندریگر روڈ، انہوں نے ماضی کے مقابلے ان کی موجودہ حالت میں نمایاں بہتری کو نوٹ کیا۔ وہاب نے بتایا کہ میونسپل باڈیز نے میٹروپولیٹن کمشنر کے ساتھ مل کر مختلف محلوں اور گلیوں میں پانی سے متعلق مسائل کو حل کیا ہے۔

تنقیدوں کا جواب دیتے ہوئے، وہاب نے کہا کہ اگرچہ کمروں کے آرام سے تنقید کرنا آسان ہے، لیکن وہ سڑکوں پر سرگرمی ہیں۔ انہوں نے جماعت اسلامی کے ٹاؤن چیئرمین کے دعوؤں کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ان کی توجہ دفتری جگہوں تک محدود رہنے کے بجائے سڑکوں کے منصوبوں پر ہے۔

ایک غیر متعلقہ معاملے پر بات کرتے ہوئے میئر وہاب نے الیکشن کمیشن کی جانب سے اپنے پر عائد جرمانے کا نوٹس ملنے پر حیرت کا اظہار کیا۔ انہوں نے ڈسٹرکٹ مانیٹرنگ آفیسر کے نوٹس اور اس کے بعد 50,000 روپے جرمانے سے لاعلمی کا دعویٰ کیا۔مرتضیٰ وہاب نے اخلاقی معیارات کو برقرار رکھنے کا عہد کیا اور حکام پر زور دیا کہ وہ انہیں کراچی کے میئر کی کسی بھی انتخابی مہم کے بارے میں مطلع کریں۔

زبردستی تقرری کے الزامات کے جواب میں وہاب نے واضح کیا کہ وہ زبردستی میئر نہیں بنے تھے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اعلیٰ حکام کی ہدایات کے دوران بھی وہ سڑکوں کے منصوبوں میں سرگرم تھے۔ مرتضیٰ وہاب نے گورنر کی حمایت پر اظہار تشکر کیا اور براہ راست مداخلت کے اختیارات کے بغیر امداد کا اعلان کرنے پر ان کا شکریہ ادا کیا۔

مرتضیٰ وہاب نے کراچی کی سڑکوں کو پانی سے صاف کرنے میں بلدیاتی کوششوں کے ٹھوس نتائج پر روشنی ڈالی، جو شہر کے بنیادی ڈھانچے کے چیلنجوں سے نمٹنے میں مثبت پیش رفت کا اشارہ ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

سونے کی قیمتوں میں نمایاں کمی: ایک تولہ کی قیمت اب 242,000 روپے ہے

مقامی مارکیٹ میں سونے کی فی تولہ قیمت میں 6200 روپے کی کمی دیکھی گئی۔ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *