ڈالر کی قیمت میں اصافہ روپہ بھی مہنگا

پاکستان میں، امریکی ڈالر نے اپنے بڑھنے کا رجحان جاری رکھا ہے، پاکستانی روپے کے مقابلے میں مزید مضبوطی حاصل کر لی ہے۔ یہ پیشرفت اقتصادی چیلنجوں کے پس منظر میں ہوئی ہے، بشمول افراط زر کے دباؤ اور بیرونی قرضوں کے خدشات۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کے مطابق امریکی ڈالر کی انٹربینک ریٹ 17 پیسے اضافے سے 17 روپے 50 پیسے تک پہنچ گئی۔ آج کاروبار کے اختتام تک 278.29۔ یہ روپے کے پچھلے دن کے بند ہونے کی شرح سے نمایاں اضافہ ہے۔ 278.12، 18 پیسے کے اضافے کے بعد۔

امریکی ڈالر کے مقابلے پاکستانی روپے کی قدر میں کمی پالیسی سازوں اور ماہرین اقتصادیات کے لیے یکساں تشویش کا باعث بنی ہوئی ہے۔ کمزور روپیہ درآمدات کو مزید مہنگا کرتا ہے، جس کی وجہ سے مہنگائی بڑھ جاتی ہے۔ یہ غیر ملکی کرنسیوں میں متعین بیرونی قرضوں کی خدمت کی لاگت کو بھی بڑھاتا ہے۔

ڈالر کی قدر میں اضافے کو کئی عوامل قرار دیا جا سکتا ہے۔ ایک اہم عنصر مارکیٹ میں ڈالر کی طلب اور رسد کے درمیان عدم توازن ہے۔ ڈالر کی زیادہ مانگ کے ساتھ، اس کی قدر روپے کی نسبت بڑھ جاتی ہے۔ یہ مطالبہ مختلف عوامل سے ہو سکتا ہے، بشمول درآمدی ادائیگیوں میں اضافہ یا ترسیلات زر میں کمی۔

سیاسی اور معاشی غیر یقینی صورتحال بھی کرنسی کے اتار چڑھاؤ میں کردار ادا کر سکتی ہے۔ سرمایہ کار غیر یقینی صورتحال کے وقت ڈالر جیسی محفوظ پناہ گاہ کی کرنسیوں کی تلاش کر سکتے ہیں، جس کی وجہ سے اس کی قدر میں اضافہ ہوتا ہے۔

روپے کی قدر میں کمی کے معیشت پر کئی اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔ ایک فوری اثر درآمدی سامان کی قیمت پر پڑتا ہے، جو صارفین کے لیے قیمتوں میں اضافے کا باعث بن سکتا ہے۔ یہ، بدلے میں، افراط زر کے دباؤ میں حصہ ڈال سکتا ہے۔

روپے کی قدر میں کمی ملک کے بیرونی قرضوں کے بوجھ کو بھی متاثر کر سکتی ہے۔ پاکستان کے پاس غیر ملکی کرنسیوں میں نمایاں بیرونی قرضہ ہے۔ کمزور روپے کا مطلب ہے کہ اس قرض کو پورا کرنے کے لیے مزید مقامی کرنسی کی ضرورت ہے، جس سے حکومت پر بوجھ بڑھتا ہے۔

مزید برآں، کمزور روپیہ ملک کے تجارتی توازن کو بھی متاثر کر سکتا ہے۔ جہاں ایک کمزور کرنسی برآمدات کو زیادہ مسابقتی بناتی ہے، وہیں یہ درآمدات کو بھی مہنگی بناتی ہے۔ اس سے تجارتی خسارہ بڑھ سکتا ہے، جس کے مجموعی توازن ادائیگی پر اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔

آخر میں، پاکستانی روپے کے مقابلے امریکی ڈالر کی حالیہ قدر میں اضافہ ملک کو درپیش وسیع تر اقتصادی چیلنجوں کی عکاسی کرتا ہے۔ پالیسی سازوں کو صورتحال پر بغور نگرانی کرنے اور کرنسی کو مستحکم کرنے اور بنیادی معاشی عدم توازن کو دور کرنے کے لیے مناسب اقدامات کرنے کی ضرورت ہوگی۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *