عجیب بات یہ ہے کہ ایک ہی سیاسی جماعت کے ساتھ یہ سب ہو رہا ہے: جسٹس اطہر من اللہ

سپریم کورٹ میں پرویز الٰہی کے کاغذات نامزدگی مسترد ہونے کے خلاف اپیل کی سماعت کے دوران جسٹس اطہر من اللہ نے صرف ایک سیاسی جماعت کے ساتھ پیدا ہونے والی عجیب و غریب صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ریٹرننگ آفیسر کا کردار رکاوٹیں پیدا کرنے کے بجائے انتخابی عمل کو آسان بنانا ہونا چاہیے۔ جسٹس جمال مندوخیل نے 10 مرلہ کے پلاٹ سے متعلق دستاویزات تک رسائی سے متعلق سوال اٹھایا تو انکشاف ہوا کہ پٹواری سے معلومات وکیل حفیظ احسان کھوکھر نے حاصل کیں۔

سپریم کورٹ نے پی ٹی آئی کے صدر پرویز الٰہی کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دے دی۔ جسٹس منصور علی شاہ نے آرٹیکل 17 پر زور دیتے ہوئے کہا کہ انتخابات میں کسی کو بغیر کسی ٹھوس وجوہات کے محدود نہیں کرنا چاہیے، حق رائے دہی سے محرومی پر حق رائے دہی کی اہمیت پر زور دیا۔ 2018 کے فیصلے کا حوالہ تھا، لیکن جسٹس اطہر من اللہ نے اس کا حوالہ دینے سے انکار کر دیا، یہ کہتے ہوئے کہ اس میں سپریم کورٹ کا اپنا بیان حلفی ہے۔

جسٹس مندوخیل نے نشاندہی کی کہ پرویز الٰہی کے کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال یکطرفہ طور پر کی گئی۔ اس دعوے کا مقابلہ فیصل صدیقی نے کیا، جس نے دلیل دی کہ پرویز الٰہی کی نمائندگی کرنے والے تمام وکلاء کو جانچ پڑتال کے دوران زبردستی کیا گیا۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ سپریم کورٹ نے پرویز الٰہی کو پی پی 32 گجرات کی حد تک الیکشن لڑنے کی اجازت دیتے ہوئے قومی اسمبلی کی دو نشستوں کے لیے اپیلیں واپس لے لیں۔
سپریم کورٹ کی سماعت نے انتخابی عمل کے منصفانہ ہونے کے بارے میں خدشات کی طرف توجہ دلائی، ججوں نے رکاوٹ کے بجائے سہولت کاری کی ضرورت پر زور دیا۔ سابقہ ​​فیصلے کا حوالہ اور جانچ پڑتال کے عمل کے دوران تنازعات نے کارروائی میں پیچیدگی کا اضافہ کیا۔ بالآخر عدالت نے پرویز الٰہی کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دے دی تاہم ان کی جانب سے بعض اپیلیں واپس لے لی گئیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

امریکی رکن کانگریس نے کملا ہیرس کے خلاف مواخذے کی دستاویزات جمع کرائیں

امریکی رکن کانگریس اینڈی اوگلس نے باضابطہ طور پر نائب صدر کملا ہیرس کے مواخذے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *