لاہور میں پتنگ کی ڈور حادثات میں دو افراد زخمی

لاہور میں آج شہر کے مختلف علاقوں میں پتنگ کی ڈور کے باعث حادثات میں دو افراد زخمی ہوگئے۔ یہ واقعات پتنگ بازی سے وابستہ مسلسل خطرات کو نمایاں کرتے ہیں، خاص طور پر موسم بہار کے موسم میں جب یہ سرگرمی مقبول ہوتی ہے۔

لاہور کی نشتر کالونی میں رضوان نامی واپڈا ملازم پتنگ کی ڈور حادثے کا شکار ہو گیا۔ ریسکیو حکام کے مطابق رضوان موٹرسائیکل پر سوار تھا کہ پتنگ کی ڈور اس کی گردن میں الجھ گئی۔ تیز دھار کی وجہ سے اس کی گردن پر چوٹیں آئیں جس کے لیے فوری طبی امداد کی ضرورت ہے۔ ریسکیو کارکن فوری طور پر جائے وقوعہ پر پہنچے اور اسے مزید علاج کے لیے قریبی اسپتال منتقل کرنے سے قبل ابتدائی طبی امداد فراہم کی۔

شہر کے ایک اور علاقے ماڈل ٹاؤن میں بھی عدنان نامی نوجوان کے ساتھ ایسا ہی واقعہ پیش آیا۔ عدنان بھی اپنی موٹر سائیکل پر سوار تھا کہ اچانک پتنگ کی ڈور اس کے گلے میں لپٹی۔ تار کی طاقت کے باعث وہ زخمی ہوا، جس سے امدادی کارکنان اس کی مدد کے لیے پہنچ گئے۔ ابتدائی طبی امداد کے بعد عدنان کو اضافی دیکھ بھال کے لیے ہسپتال لے جایا گیا۔

ان واقعات نے ایک بار پھر پتنگ بازی سے وابستہ خطرات بالخصوص تیز اور خطرناک ڈور کے استعمال کے بارے میں خدشات کو جنم دیا ہے۔ حکام کی جانب سے بعض علاقوں میں پتنگ بازی پر پابندی کو نافذ کرنے کی کوششوں کے باوجود، ایسے واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں، جو عوام کی حفاظت کے لیے خطرہ ہیں۔

ان خطرات کے پیش نظر کراچی میں حکام نے پتنگ بازی اور فروخت پر پابندی عائد کر دی ہے۔ اس فیصلے کا مقصد ایسے ہی واقعات کو روکنا اور شہریوں کو نقصان سے بچانا ہے۔ پابندی کی خلاف ورزی کرنے والوں کو تعمیل کو یقینی بنانے اور حادثات کو روکنے کے لیے سخت قانونی کارروائی کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

دریں اثنا، ایک وائرل ویڈیو نے پنجاب پولیس کے افسران کو پتنگ بازی میں مصروف دکھایا ہے، تنازعہ کو جنم دیا ہے۔ اہلکاروں کو سرگرمی پر پابندی کے باوجود پتنگ اڑاتے دیکھا گیا۔ جس کے نتیجے میں افسران کو مزید تفتیش تک ڈیوٹی سے معطل کر دیا گیا ہے۔ یہ واقعہ قوانین اور ضوابط پر عمل کرنے کی اہمیت کی یاددہانی کے طور پر کام کرتا ہے، خاص طور پر جو کہ عوام کی حفاظت کے لیے بنائے گئے ہیں۔

آخر میں، لاہور میں پتنگ بازی کے حالیہ حادثات پتنگ بازی کے حوالے سے زیادہ سے زیادہ آگاہی اور ضوابط کے نفاذ کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہیں۔ اس طرح کے واقعات کے نتیجے میں سنگین چوٹیں اور یہاں تک کہ ہلاکتیں بھی ہو سکتی ہیں، جو عوام کے لیے محفوظ تفریحی سرگرمیوں کو فروغ دینے کی اہمیت کو واضح کرتی ہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *