چاہتے ہیں گوادر اور چاہ بہارکو جوڑ کر سسٹر پورٹس بنا کر مضبوط اقتصادی تعلقات قائم کیے جا سکتے ہیں

ایرانی سفیر رضا امیری کے حالیہ بیانات پاکستان اور ایران کے درمیان خاص طور پر انفراسٹرکچر کی ترقی اور تجارت کے ذریعے مضبوط اقتصادی تعلقات کو فروغ دینے میں گہری دلچسپی کی نشاندہی کرتے ہیں۔ پاکستان میں گوادر اور ایران میں چابہار کی بندرگاہوں کو آپس میں جوڑنے کی ان کی خواہش ظاہر کرتی ہے کہ وہ بہن بندرگاہیں بنائے جائیں جو علاقائی روابط اور اقتصادی تعاون کے لیے ایک اسٹریٹجک وژن کی نشاندہی کرتی ہے۔ ان خیالات کا اظہار اسلام آباد چیمبر آف کامرس میں ایک تقریب کے دوران کیا گیا جہاں سفیر امیری نے دوطرفہ تعلقات کو مضبوط بنانے میں پاکستان ایران گیس پائپ لائن کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔

گوادر اور چابہار کے درمیان ایک بندرگاہ کے طور پر مجوزہ کنکشن وسیع تر علاقائی عزائم کے مطابق ہے، جس میں چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) اور دیگر علاقائی اقدامات میں شرکت شامل ہے۔ اس طرح کا تعاون ممکنہ طور پر تجارتی راستوں کو بڑھا سکتا ہے اور وسطی اور مغربی ایشیائی ممالک کے درمیان ہموار راہداری کو آسان بنا سکتا ہے، جس سے خطے میں اقتصادی ترقی اور استحکام کو مزید فروغ ملے گا۔

علاقائی تعاون کو بڑھانے کے لیے سرحدی کراسنگ پوائنٹس کھولنے پر سفیر امیری کا زور تجارتی سہولت اور عوام کے درمیان تبادلے کو بہتر بنانے کے لیے ایک عملی نقطہ نظر کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ نقطہ نظر اقتصادی سرگرمیوں اور ثقافتی تبادلے میں اضافہ کا باعث بن سکتا ہے جس سے دونوں ممالک کو فائدہ ہو گا۔

سفیر کا گزشتہ 11 مہینوں میں 2.5 بلین ڈالر سے زیادہ کے دوطرفہ تجارتی حجم کا حوالہ پاکستان اور ایران کے درمیان موجودہ اقتصادی تعلقات کو ظاہر کرتا ہے۔ دونوں ممالک اس حجم کو 5 بلین ڈالر تک بڑھانے کی خواہش رکھتے ہیں، جو اپنی اقتصادی شراکت داری کو گہرا کرنے کے مشترکہ عزم کی نشاندہی کرتے ہیں۔

سفیر امیری نے پاکستانی سرحد کے قریب تقریباً 1000 کلومیٹر طویل گیس پائپ لائن بچھانے میں ایران کی خاطر خواہ سرمایہ کاری پر بھی روشنی ڈالی اور دونوں ممالک کے لیے اس منصوبے کے ممکنہ فوائد پر زور دیا۔ انہوں نے گیس پائپ لائن منصوبے کو آگے بڑھانے میں پاکستان کی دلچسپی کا خیرمقدم کیا، جو پاکستان کی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے اور اس کی معیشت کو تقویت دینے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔

مزید برآں، سفیر امیری کا گیس پائپ لائن منصوبے میں ترکی اور آذربائیجان کی شمولیت کا ذکر اس اقدام کی علاقائی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔ یہ توانائی کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی میں علاقائی تعاون کے وسیع تر رجحان کی عکاسی کرتا ہے، جس کے دور رس اقتصادی اور جغرافیائی سیاسی اثرات ہو سکتے ہیں۔

آخر میں، سفیر امیری کے ریمارکس پاکستان اور ایران کے درمیان اقتصادی تعاون کو بڑھانے کے لیے مضبوط عزم کی نشاندہی کرتے ہیں۔ گوادر اور چابہار بندرگاہوں کا رابطہ، پاکستان ایران گیس پائپ لائن اور تجارتی حجم میں اضافہ سمیت مجوزہ اقدامات خطے کے اقتصادی منظرنامے کو تبدیل کرنے اور دونوں ممالک کے درمیان دیرینہ تعلقات کو مزید گہرا کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *