اسلام آباد میں خواتین مارچ کا انعقاد، شرکاء اور پولیس آمنے سامنے آگئے۔

اسلام آباد میں خواتین مارچ کا انعقاد، شرکاء اور پولیس آمنے سامنے آگئے۔ خواتین کے عالمی دن کے موقع پر اسلام آباد میں نیشنل پریس کلب کے سامنے خواتین مارچ کا انعقاد کیا گیا۔ مارچ، جو خواتین کے حقوق کی سرگرمی کی علامت ہے، کا مقصد صنفی مساوات کے بارے میں بیداری پیدا کرنا اور خواتین کے خلاف تشدد، امتیازی سلوک اور صنف پر مبنی دقیانوسی تصورات جیسے مسائل کو حل کرنا ہے۔

تاہم، جیسے ہی مارچ ڈی چوک کی طرف بڑھا، کشیدگی بڑھ گئی کیونکہ شرکاء اور پولیس آمنے سامنے آگئے۔ امن و امان برقرار رکھنے کے لیے فکرمند پولیس نے شرکاء کو مزید آگے بڑھنے سے روکنے کی کوشش کی۔ انہوں نے مارچ کرنے والوں کو آگے بڑھنے سے روکنے کے لیے خاردار تاریں ایک رکاوٹ کے طور پر کھڑی کر دیں۔

رکاوٹوں کے باوجود شرکاء نے بے خوف نعرے لگائے اور اپنے حقوق کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے مشکلات کا سامنا کرتے ہوئے لچک اور عزم کا مظاہرہ کیا، خاردار تاریں ہٹا کر اپنی شکایات کا اظہار کیا۔

اسلام آباد میں خواتین کا مارچ صرف ایک مقامی تقریب نہیں بلکہ خواتین کو بااختیار بنانے اور صنفی مساوات کو فروغ دینے کی عالمی تحریک کا حصہ تھا۔ اس نے خواتین کے لیے اپنی آواز بلند کرنے اور اپنے حقوق کی وکالت کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر کام کیا۔

پاکستان میں خواتین کا عالمی دن ملک بھر کے مختلف شہروں میں ریلیوں، احتجاجی مظاہروں اور تقریبات سمیت مختلف تقریبات کے ساتھ منایا گیا۔ یہ دن خواتین کے حقوق میں ہونے والی پیش رفت پر غور کرنے اور ان چیلنجوں کو تسلیم کرنے کا موقع تھا جو اب بھی موجود ہیں۔

اسلام آباد میں خواتین کے مارچ نے صنفی بنیاد پر تشدد، امتیازی سلوک اور عدم مساوات جیسے مسائل سے نمٹنے کی اہمیت کو اجاگر کیا۔ اس نے اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کارروائی کا مطالبہ کیا کہ خواتین کے ساتھ مساوی سلوک کیا جائے اور انہیں مردوں کے برابر مواقع میسر ہوں۔

شرکاء اور پولیس کے درمیان کشیدگی کے باوجود، مارچ اپنے ابتدائی مرحلے میں پرامن طور پر اختتام پذیر ہوا۔ تاہم منتظمین نے پولیس اور انتظامیہ کے خلاف اپنی شکایات کو دور کرنے کے لیے ایک پریس کانفرنس کا اعلان کیا۔

اسلام آباد میں خواتین کا مارچ ایک یاد دہانی تھا کہ خواتین کے حقوق کی جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ خواتین کھڑے ہونے اور ناانصافی کے خلاف آواز اٹھانے کے لیے تیار ہیں، چاہے انہیں کسی بھی رکاوٹ کا سامنا ہو۔ یہ مارچ تبدیلی پیدا کرنے کے لیے خواتین کے اکٹھے ہونے اور صنفی مساوات کے لیے جاری جدوجہد میں ایک قدم آگے بڑھنے کا ثبوت تھا۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *